سانحہ بارہ مئی شہداء کے لواحقین آج بھی انصاف کے منتظر ہیں، اسفنديار ولی

سانحہ بارہ مئی شہداء کے لواحقین آج بھی انصاف کے منتظر ہیں، اسفنديار ولی

پشاور۔۔۔ عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی صدر اسفندیارولی خان نے کہا ہے کہ عدلیہ کی بحالی کیلئے جانوں کی قربانیاں دینے والے آج بھی انصاف کے منتظر ہیں۔سابق چیف جسٹس افتخار چوہدری کا بحالی کے بعد اس کیس کو منطقی انجام تہ نہ پہنچانا افسوسناک اور تاریخی جبر ہے۔

 

سانحہ 12مئی کی 15ویں برسی پر جاری پیغام میں اے این پی سربراہ اسفندیارولی خان نے کہا کہ جسٹس (ر) افتخارچوہدری نے اپنا مقصد حاصل کیا لیکن انکی بحالی کیلئے جانوں کے نذرانے پیش کرنیوالوں کا پوچھا تک نہیں۔12مئی 2007ء کے شہداء جمہوریت کے شہداء ہیں جنہوں نے جمہوریت کی بحالی کیلئے جانیں قربان کیں۔آج انہی قربانیوں کے بدولت پاکستان میں جمہوریت بحال اور پارلیمنٹ فعال ہے۔

 

انہوں نے کہا کہ آئین توڑنے والوں کے خلاف اگر ایک بار کارروائی ہوتی تو دوسری بار کوئی سوچ بھی نہیں سکتا تھا۔پاکستان میں جمہوریت کو پنپنے نہیں دیا جارہا، آج بھی جمہوری نظام کے خلاف سازشیں ہورہی ہیں۔آئین شکن اور جمہوریت مخالف قوتوں کو سزائیں نہ دی گئیں تو پاکستان کی سلامتی کو خطرہ لاحق ہوسکتا ہے۔

 

اے این پی سربراہ کا کہنا تھا کہ امن،جمہوری نظام کی مضبوطی، پارلیمنٹ کی بالادستی اور آئینی لڑائی میں کسی قربانی سے دریغ نہیں کریں گے۔جمہوری نظام کیلئے قربانی دینے والا ہر کارکن ہمارا فخر ہے،12مئی کے شہداء کو خراج عقیدت پیش کرتے ہیں۔